تازہ ترین

GB News

پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں اضافہ مسترد ،وزیراعظم ناکامی کا اعتراف کرتے ہوئے مستعفی ہوجائیں،اپوزیشن

Share Button

اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک،آئی این پی)اپوزیشن نے پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں اضافہ مسترد کرتے ہوئے کہا ہے کہ بجٹ منظوری سے پہلے ہی منی بجٹ آگیا،پیٹرولیم قیمتوں میں 33 فیصد اضافہ چینی اسکینڈل پارٹ ٹو ہے،پہلے پیٹرول سستا کروا کر ذخیرہ کروایا اور پھر مہنگا کرکے عمران خان نے مافیا کو فائدہ پہنچایا،مافیا جیت گیا عوام ہار گئے،وزیراعظم ناکامی کا اعتراف کرتے ہوئے مستعفی ہوجائیں،نجی ٹی وی کے مطابق پیٹرول پر47اور ڈیزل پر 51روپے فی لیٹر ٹیکس وصول کیا جارہا ہے،پاکستان مسلم لیگ (ن) کے صدر اور قومی اسمبلی میں اپوزیشن لیڈر شہبازشریف نے ایک بیان میں کہا کہ کہ حکومت نے پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں اضافہ کرکے بجٹ سے پہلے ہی منی بجٹ دے دیا ہے۔ پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں حالیہ اضافہ اس وقت کیا گیا جب ملک میں پہلے ہی پیٹرول کی قلت ہے، چینی کے بعد پیٹرول مافیا کو بھی عوام کو لوٹنے کا لائسنس دے دیا گیا ہے۔اپوزیشن لیڈر کا کہنا تھا کہ پیٹرول مافیا جیت گیا ہے اور عوام ہار گئے ہیں، پیٹرول کے معاملے میں بھی چینی چوری والی واردات دہرائی گئی ہے، مہنگائی کا سونامی غریبوں کو کھاجائے گا۔پاکستان پیپلز پارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری نے کہا کہ وزیر اعظم عمران خان اپنی نااہلی کی وجہ سے ڈوبتی معیشت کو عوام کی جیبوں پر ڈاکا ڈال کر سہارا نہیں دے سکتے۔پیٹرول سستا ہونے سے کچھ سستا نہیں ہوا تھا مگر مہنگا ہونے سے مزید مہنگائی ضرور ہوگی، یہی نیا پاکستان ہے۔ پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں تاریخی اضافہ کرنے والے ماضی میں معمولی اضافوں پر تنقید کرتے رہے ہیں،میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے ن لیگ کے رہنما شاہد خاقان عباسی احسن اقبال اور خواجہ آصف نے کہا کہ 31 مئی 2018 کو جب حکومت چھوڑی پاکستان پیٹرول 72.11 روپے میں خریدتا تھا جو ٹیکس ڈال کر 87.70 روپے میں فروخت ہوتا تھا، آج جو پیٹرول کی قیمت رکھی گئی اس کی قیمت 55 روپے ہے، پیٹرول پر 44 روپے سے زائدفی لیٹر ٹیکس لاگو کیا گیا ہے، 55 سے 56 روپے پٹرول کی قیمت پر ٹیکس لگا کر اسے 67 کے قریب فروخت ہونا چاہیے۔ اپوزیشن کی تمام پارٹیوں سے مل کر مشترکہ لائحہ طے کریں گے۔دوسری جانب نجی ٹی وی کے مطابق حکومت عوام سے ایک لیٹر پیٹرول پر 47 روپے ٹیکس وصول کررہی ہے۔رپورٹ کے مطابق ایک لیٹر پیٹرول پر 30 روپے پیٹرولیم لیوی اور 14 روپے 55 پیسے جی ایس ٹی وصول کیا جارہا ہے۔ ایک لیٹر پیٹرول کی قیمت میں 2 روپے 44 پیسے کسٹم ڈیوٹی بھی شامل ہے۔اس کے علاوہ حکومت ایک لیٹر ڈیزل پر 51 روپے ٹیکس وصول کر رہی ہے، ڈیزل پر 30 روپے پیٹرولیم لیوی وصول کی جارہی ہے جب کہ ایک لیٹر ڈیزل کی قیمت میں 14 روپے 74 پیسے جی ایس ٹی اور 6 روپے 20 پیسے کسٹم ڈیوٹی شامل ہے۔

Facebook Comments
Share Button