Image

امریکہ سپر پاور کیسے بنا

اطہر مسعود وانی

ترقی پذیر ملکوں میں اکثر یہ بات سننے میں آتی ہے کہ امریکی معیشت روبہ زوال ہے اور آئندہ چند دھائیوں میں امریکہ سے دنیا کی سپر پاور کی حیثیت چھن جائے گی۔دنیا کی سب سے بڑی معیشت بننے میں محض پیداوار، برآمدات ،مضبوط کرنسی ، مضبوط فوجی طاقت ہی کافی نہیں ہے بلکہ امریکہ نے یہ مقام گزشتہ ایک صدی کے دوران کئی مراحل میں اپنی برتری حاصل کرتے ہوئے حاصل کیا ہے اور امریکہ کی مضبوط عالمی معیشت اور اس بنیاد پر امریکہ کی سپر پاور کی حیثیت کو ختم کرنے کے امکانات دور دور تک نظر نہیں آتے۔یہاں ہم جائزہ لیتے ہیں کہ امریکہ کو کس طرح دنیا کی سب سے مضبوط اور فیصلہ کن عالمی معیثت کا مقام حاصل ہوا ہے کہ جس بنیاد پر امریکہ دنیا کی سب سے بڑی اقتصادی اور فوجی طاقت بن چکا ہے اور اسی بنیاد پر وہ دنیا کے مختلف خطوں کی تقدیر پہ بڑی حد تک اپنی مرضی مسلط کرتا ہے۔اس وقت دنیاکے197ممالک میںتقریبا180مختلف کرنسیاں استعمال ہو رہی ہیں۔ان میں کچھ ایسی کرنسیاں بھی ہیں جو ایک سے زیادہ ممالک میں استعمال ہوتی ہیں۔جیسے یورو جو یورپ کے24سے زائد ممالک کی کرنسی ہے،اسی طرح امریکی ڈالر بھی اس وقت تقریبا14ممالک کی بنیادی کرنسی ہے۔ دنیا کے تمام ممالک اپنی کرنسی کے علاوہ غیر ملکی کرنسی کے ذخائر بھی رکھتے ہیں جنہیں زر مبادلہ کے ذخائر کہا جاتا ہے۔زرمبادلہ کے ذخائر رکھنے کا بنیادی مقصد تجارت یا دیگر ممالک سے لین دین کے لئے بیرونی ممالک کو ادائیگیاں کرنا ہوتا ہے۔ دنیا کے تمام ممالک کے غیر ملکی کرنسیوں کے ذخائر میں59 فیصد امریکی ڈالر کی صورت میں ہے۔امریکہ اس وقت دنیا کی سپر پاور ہے اور امریکہ کی معیشت کو دنیا کی طاقتور ترین معیشت اور امریکی ڈالر کو دنیا کی طاقتور ترین کرنسی کی حیثیت حاصل ہے۔امریکی معیشت اور کرنسی کی ترقی کا یہ سفر کئی دہائیوں کے سفر پہ مشتمل ہے ۔دنیا کی زیادہ تر تجارت امریکی ڈالر میں ہوتی ہے اور امریکی ڈالر دنیا کی سب سے طاقتور کرنسی کی حیثیت رکھتی ہے۔مختلف ادوار میںدنیا میں تجارت اور لین دین کے لئے مختلف طریقے رائج رہے۔19ویں صدی کے اختتام اور 20صدی کے شروع میںدنیا کا مالیاتی نظام مختلف اقسام کی کاغذی کرنسی پر منتقل ہور ہا تھا،اس صورتحال میں مختلف ممالک میں تجارت اور مالی لین دین کے لئے کوئی مشترکہ نظام بنانے کی ضرورت محسوس کی جا رہی تھی،ہر ملک کی اپنی ایک کرنسی تھی اورکرنسی کی چھپائی اور ترسیل کا کوئی واضح اصول بھی نہیں تھا، اس لئے ہر ملک اپنی ضرورت کے مطابق چھاپتا اور استعمال کرتا تھا،جس سے مختلف ممالک کے درمیان کرنسی کے استعمال میں مشکلات کا سامنا تھا۔اس مسئلے کے حل کے لئے زیادہ تر ممالک اس بات پہ متفق ہوئے کہ کرنسی کی قدر سونے کی مخصوص مقدار کے مطابق رکھی جائے اور کرنسی کو چھاپنے کے لئے حکومت کے پاس اسی حساب سے سونا بھی موجود ہونا چاہئے۔1873میںایک ڈالر کی قدر ایک اشاریہ پانچسو چار 1.504گرام سونا مقرر کی گئی،اس حساب سے ایک ہزار ڈالر کرنسی چھاپنے کے لئے امریکی حکومت کے پاس 1504گرام سونا موجود ہونا ضروری تھا،یعنی یہ طے گیا کہ جس ملک کے پاس جتنا سونا ہو گا، اسی مالیت کے برابر وہ ملک کرنسی چھاپ سکے گی، اس سے زیادہ نہیں۔پہلی جنگ عظیم کے بعد یہ یہ نظام درہم برہم ہو گیا،پہلی جنگ عظیم میں شامل ممالک کو جنگی اخراجات کے لئے بے تحاشا روپیہ درکار تھا اور اس ضرورت کو پورا کرنے کے لئے ان ممالک نے پھر سے اپنی مرضی سے اپنی ضرورت کے مطابق کرنسی نوٹ چھاپنے شروع کرد یئے۔ اس کے نتیجے میں بعض ممالک میںافراط زر بہت زیادہ بڑھ گئی اور ان کی کرنسی کی قدر بہت ہی کم ہو گئی۔ اس دور کی سپر پاور برطانیہ کی کالونیاں پوری دنیا میں پھیلی ہوئی تھیں،برطانیہ نے اپنی کرنسی کی قدر برقرار رکھنے اور اپنی پوزیشن برقرار رکھنے کے مقصد سے اپنی کرنسی کو سونے کے ساتھ منسلک رکھنے کی کوشش تو کی لیکن 1931میںبرطانیہ نے بھی کرنسی کے پیچھے سونے کے معیار کو قائم رکھنا ترک کر دیا،اس وجہ سے برطانوی کرنسی پاﺅنڈ کی قدر میںشدید کمی واقع ہوئی اور بین الاقوامی تاجر جو پاﺅنڈ میں تجارت کیا کرتے تھے،ان کے بنک اکاﺅنٹ اس سے بہت متاثر ہوئے۔ جنگی اخراجات پورے کرنے کے لئے برطانیہ جیسی سپر پاور کو بھی قرض لینے پر مجبور ہونا پڑا۔ پہلی جنگ عظیم ، جولائی1914سے نومبر 1918کے بعد1920 میںبرطانیہ کا قومی خسارہ سات اشاریہ آٹھ 7.8ارب پاﺅنڈ تک پہنچ گیا،جو جنگ عظیم اول سے پہلے چھ سو ملین پاﺅنڈ تھا،دوسری جنگ عظیم کے بعد برطانیہ کا یہ قومی خسارہ بڑھتے بڑھتے اکیس21ارب پاﺅنڈ تک پہنچ گیا جو اس وقت برطانیہ کی مجموعی قومی پیداوارGDP کا تین گنا بنتا تھا۔اسی طرح باقی ممالک جیسے روس ، فرانس اور جرمنی بھی شدید مالی خسارے کا شکار ہو گئے۔ان دونوں عالمی جنگوں میں امریکہ کی معاشی اور سفارتی پالیسی بہت کامیاب رہی۔ امریکہ نے ان جنگوں میں پہلے جنگی تاجر کے طور پراور بعد میں جنگی فریق کے طور پر حصہ لیا، جب پوری دنیا ان جنگوں میں مصروف تھی تو امریکہ اپنے تمام سرمائے اور افرادی قوت کے ذریعے کپاس،گندم، ربڑ،مشینری، قیمتی دھاتوں اور اسلحے کی پیداوار میں مصروف تھااور ایک مختصر ترین عرصے میں امریکہ نے دنیا کا عظیم ترین اقتصادی عروج حاصل کیااور دنیا کا ایک بڑا برآمد کنندہ، ایکسپورٹر بن گیا۔1913سے1917کے صرف چار سال کے عرصے میںامریکہ کی کل برآمدات دو اشاریہ چار 2.4بلین ڈالرسے بڑھ کر تقریباچھ اشاریہ دو6.2 بلین ڈالر تک پہنچ گئی تھی جبکہ اس وقت کی عالمی سپر پاوربرطانیہ کی برآمدات اڑھائی2.50ارب ڈالرکے قریب تھیں۔اسی طرح دوسری جنگ عظیم کے آغاز میں بھی امریکہ باقاعدہ طور پر جنگی فریق نہیں تھا اور انہوں نے اپنے تمام تر وسائل برآمدات کے لئے استعمال کئے۔1945 تک امریکہ کی برآمدات تقریبا دس ارب ڈالرسے بھی زیادہ ہو گئی تھیں جس میں سے زیادہ تر برآمدات برطانیہ اور روس کو کی جاتی تھیں۔ اس کے مقابلے میں برطانیہ کی برآمدات تین ارب ڈالر کے قریب تھیں۔امریکہ کی طرف سے یہ شرط عائد تھی کہ وہ جنگ کے دوران یہ تمام اشیا اپنی کرنسی یعنی ڈالر یا سونے کے عوض ہی فروخت کرے گا۔ اس وقت تمام ممالک کے پاس امرکی ڈالر تو نہیں تھے،لہذا امریکہ نے اس طریقے سے دوسرے ممالک کے سونے کے ذخائراپنے پاس جمع کر لئے۔ یوں دونوں عالمی جنگوں سے امریکہ نے اپنے لئے کاروبار کے ایسے مواقع پیدا کئے کہ جب دنیا کی بڑی طاقتوں کی معیشتیں جنگ کی نظر ہورہی تھیں، تو تب امریکہ دنیا کی معیشت کا تقریبا تین چوتھائی سوناتجارت سے اپنے پاس ذخیرہ کرنے میں کامیاب ہو گیا۔امریکہ کے سونے کے ذخائر1910میںدو ہزار ٹن تھے جو1945میں بیس ہزار ٹن تک پہنچ گئے۔ان دونوں عالمی جنگوں کے دوران امریکہ حیران کن معاشی ترقی کے سبب دوسرے ملکوں کو قرض دینے کا آخری آپشن بھی بن چکا تھا۔دوسری جنگ عظیم کے دوران امریکہ نے اتحادی ممالک کو جنگی ساز و سامان و دیگر امدار کو لینٹ لیزایکٹ یعنی لیز پر قرضہ کے طور پر بھی دینا شروع کردیا لینٹ لیز قرضہ کے تحت امریکی حکومت کسی بھی ملک کو جنگی سامان بیچنے کے بجائے قرض، لیز یاامداد کے طور پر بھی دے سکتی تھی،اس قرض یا امدار کا مقصدان ممالک کی دفاعی طورپر مدد کرنا تھاجن کی سلامتی امریکہ کی سلامتی کے لئے اہم سمجھی جاتی تھی۔اس وقت تک امریکہ خود جنگ میں باقاعدہ طور پرابھی فریق نہیں بنا تھااور تنازعات میں سرکاری طور پر غیر جانبدار تھا،اس امدار کا زیادہ ترحصہ برطانیہ اور ان دیگر ممالک کو دیا گیاجو جرمنی اور جاپان کے خلاف حالت جنگ میں تھے اور مزید اسلحہ خریدنے کی سکت نہیں رکھتے تھے۔ لینٹ لیز ایکٹ کے تحت ہی برطانیہ کی سپر پاور کو اس قابل بنایاکہ وہ جرمنی کے خلاف عملی طور پر جنگ جار ی رکھ سکے۔دسمبر1941میںپرل ہاربر پر جاپان کے حملے کے بعد جب امریکہ باقاعدہ پر طور جنگ میں فریق بن گیا لیکن اس لینٹ لیز ایکٹ کے تحت امداد کاسلسلہ پھر بھی جاری رہا اور جنگ کے اختتام تک امریکہ 30سے زائد ممالک کو تقریبا50ارب ڈالر امداد دے چکا تھا۔ان تمام عوامل کی وجہ سے امریکی ڈالرایک مضبوط عالمی کرنسی کے طور پر نمایاں ہوا اور اس وقت کی بڑی بڑی طاقتیں بھی امریکہ کی مقروض ہو گئیں۔یہ وہ موقع تھا کہ جب1944میں امریکہ نے44ممالک کے نمائندگان کو جمع کر کے ایک ایسا ایگریمنٹ کیا جو ڈالر کو ایک عالمی کرنسی بنانے کی بنیاد بنا۔1944میں44ملکوں کے نمائندوں نے بریٹن ووڈز ہمشائر میںملاقات کی تا کہ غیر ملکی زرمبادلہ کے انتظام کے لئے ایک ایسا نظام وضع کیا جائے جس سے کسی بھی ملک کو نقصان نہ ہو۔ اس موقع پر فیصلہ کیا گیا کہ دنیا کی کرنسیوں کو اب سونے سے منسلک نہیں کیا جائے گابلکہ اب سونے کے بجائے ڈالر کے مساوی قدر مقرر ہو گی، یعنی باقی ملکوں کی کرنسی کو امریکی ڈالر سے منسلک کیا جائے گا اور امریکہ ڈالر سونے کی قدر سے منسلک ہو گا۔ای اونس یعنی28.35گرام سونے کی قیمت بھی 35ڈالر مقرر کی گئی۔ کرنسی کے اس عالمی نظام کو برٹن ووڈز معاہدے کا نام دیا گیا۔اس وقت سونے کے سب سے زیادہ ذخائر امریکہ کے پاس ہی موجود تھے اور باقی ممالک جنگی اخراجات کی وجہ سے اپنے سونے کے ذخائر سے محروم ہو چکے تھے۔ان ممالک کے پاس سونا نہیں تھاکہ جس کی بنیاد پر وہ کرنسی جاری کر سکیں،اس لئے انہوں نے اپنے ملکوں کی کرنسی جاری کرنے کے لئے اپنی کرنسی کی قدر سونا رکھنے کے بجائے امریکی ڈالر رکھے جانے کی شرط منظور کر لی۔اس معاہدے کے تحت امریکہ کی بھی یہ ذمہ داری تھی کہ امریکی حکومت جتنے ڈالر جاری کرے گی، اس کے عوض اس کی قدر کے برابر سونا موجود ہونا لازمی ہو گا۔ اس طرح ان ممالک کی کرنسیاں بالواسطہ طور پر سونے سے منسلک ہو گئی۔اس نظام کے تحت مرکزی بنکوں کی اتھارٹیز بھی قائم کی گئیںجن کا کام مختلف ممالک کے درمیان کرنسیوں اور ڈالرکے درمیان شرح تبادلہ کو قائم رکھنا تھا،جبکہ امریکی ڈالر کے بدلے کسی بھی ملک کو اس کی طے شدہ قدر کے مطابق سونا واپس کرنا بھی برٹن ووڈز معاہدے کا حصہ تھا۔اس معاہدے میں عالمی تجارت کے لئے عالمی کرنسی کے طورپر تسلیم کر لیا گیا۔ اس معاہدے سے اب دو ممالک آپس میں آسانی سے تجارت کر سکتے تھے چاہے وہ ایک دوسرے پر اعتماد نہ بھی کرتے ہوں ، یعنی اگر برطانیہ فرانس کوایک ملین ڈالر کی برآمدات کرتا ہے تو برطانیہ کو یہ یقین ہوتا ہے کہ فرانس سے اس برآمدات کے بدلے میں ملنے والے ایک ملین امریکی ڈالر کے عوض امریکہ سے اس مخصوص مقدار میں سونا بھی حاصل کر سکتا ہے۔ دوسری طرف اگر برطانیہ یہ پیسہ ڈالر کے بجائے فرانسیسی فرینکس میں وصول کرتا تو اگر آج ایک ملین فرینکس کے عوض سونا ایک کلوگرام ملتا ہے تو ممکن ہے کہ ایک مہینے بعد فرانس مزید کرنسی چھاپ دیتا ، جس سے اس کی کرنسی فریکنس کی قدر گر جاتی اور ایک ملین فرینکس کے عوض اب برطانیہ کو شاید ایک کلوگرام کے بجائے سات سو گرام سوناہی ملتا۔اس طرح اس تجارت کی تمام ویلیوعملی طور پر ختم ہو جاتی۔ مزید یہ کہ اگر برطانیہ ان فرینکس کو کسی اور ملک کے ساتھ تجارت میں استعمال کرنا چاہتا اور وہ ملک فرینکس پر اعتماد نہ کرتا ہوتو برطانیہ کے لئے وہ پیسے کسی کام کے نہیںتھے لیکن اگر یہ تمام تجارت امریکی ڈالر میں ہو تو امریکہ جو اس وقت سب سے طاقتور ملک بن گیا تھا، اس بات کا ضامن تھا کہ ڈالر کے بدلے وہ ایک طے شدہ مخصوص مقدار میں سونا کسی بھی ملک کو واپس کر سکتا ہے۔ اس طرح اب کوئی بھی ملک دوسرے کسی ملک کے ساتھ ڈالر کے بدلے تجارت کر سکتا تھا کہ اسے یقین تھا کہ وہ ملنے والے ڈالر کے عوض اس کی قدر کے برابر سونا حاصل کر سکتا ہے۔برٹن ووڈز معاہدے کے نتیجے میںدو اہم عالمی مالیاتی اداروں ، ورلڈ بنک اور عالمی مالیاتی فنڈکی بنیاد رکھی گئی کیونکہ دو عالمی جنگوں کے بعد معاشی تباہ حالی کا شکار تھے اور اس صورتحال میں تمام ملکوں کو اپنے بنیادی ڈھانچے اور معیشت کی بحالی کے لئے قرضوں کی ضرورت تھی، لہذا ورلڈ بنک نے امریکی فنڈنگ سے ان ممالک کو بڑے پیمانے پر قرضے دیئے۔ اس کے علاوہ آئی ایم ایف مجموعی طور پردنیا کی اکنامی پر نظر رکھتا تھا اور چھوٹے ممالک کو ادائیگیوں کی مشکلات کو کم کرنے کے لئے قرض فراہم کرتا تھا۔اس طرح برٹین ووڈز معاہدے نے امریکہ کو دنیا کے دیگر ممالک پر ایک ممتاز حیثیت دلا دی۔یہ وہ پہلا مرحلہ تھا کہ جہاں امریکی ڈالر کو دنیا کی باقی تمام کرنسیوں کے مقابلے میں فوقیت حاصل ہوئی اور امریکی ڈالر عالمی کرنسی کے طورپر سامنے آیا۔امریکی ڈالر کو مستحکم عالمی کرنسی بنانے کا دوسرا مرحلہ یا دوسری فیصلہ کن وجہ تیل پیدا کرنے والے ملکوں کی تنظیم اوپیک کا قیام ثابت ہوا۔دوسری عالمی جنگ میں برطانیہ، فرانس ،روس،امریکہ ، جرمنی ، اٹلی اور جاپان حالت جنگ میں تھے۔ اس وقت امریکہ اور برطانیہ ہی ایسے دو ممالک تھے جن کے پاس زمین سے تیل نکالنے، اس کو استعمال کے قابل بنانے اور اس کی تجارت کرنے کی صلاحیت موجود تھی۔1938میں ایک امریکی کمپنی نے سعودی عرب میںتیل کا ایک بڑا ذخیرہ دریافت کیا اور اس میں سے تیل نکالنے کا کام شروع کر دیا۔جنگ کے دوران اٹلی نے سعودی عرب میں موجود امریکی تنصیبات پر کئی مرتبہ گولہ باری کی ۔ سعودی عرب کو اپنی زمین اور ان تنصیبات کی حفاظت کی شدیدضرورت محسوس ہوئی۔ اس وقت امریکی صدر فرینکلن روز ویلٹ نے محسوس کیا کہ اس وقت اور مستقبل میںترقی کے لئے سب سے اہم چیز تیل ہے۔امریکی صدر نے سعودی عرب کے حکمران شاہ عبدالعزیز سے طویل ملاقات کے بعد1945میںتاریخ کی ایک ایسی ڈیل کی جس نے مستقبل میں امریکی ڈالر کی تقدیر ہی بدل دی۔اس ڈیل کے مطابق امریکہ مستقبل میں سعودی عرب کی کسی بھی ممکنہ حملے سے بچنے کے لئے مدد کرے گا،اس مقصد کے لئے وہ سعودی عرب کوہر قسم کو جدید ترین فوجی اسلحہ بھی فراہم کرے گا اور اس کے بدلے سعودی عرب اپنی زمین سے نکلنے والے تیل کو صرف ڈالر کے عوض ہی فروخت کرے گا۔ یوں تیل کی فروخت ڈالر میں کی جانے لگی اور یہیں سے مشرط وسطی، مڈل ایسٹ کے ممالک کا عروج شروع ہوا۔1960میں آرگنائزیشن آف دی پیٹرولیم ایکسپورٹنگ کنٹریز ، OPECکا قیام عمل میں آیا۔اوپیک کے قیام کے بعد دنیا میں تیل کی تمام تجارت ڈالر میں ہی ہونے لگی۔یہاں امریکی ڈالر کی بالادستی کا تیسرا مرحلہ سامنے آتا ہے جس نے ڈالر کو مستحکم طور پر عالمی کرنسی بنا دیا۔برٹین ووڈز معاہدے کی رو سے کوئی بھی ملک ڈالر کے عوض امریکہ سے مقررہ مقدار میں سونا حاصل کر سکتا تھا۔اس سے1970میں امریکہ کے سونے کے ذخائر کم ہوتے ہوتے دس ہزار ٹن رہ گئے۔ یہ وہ وقت تھا کہ جب امریکہ کے لئے ڈالر کے عوض سونا واپس کرنا تقریبا ناممکن ہو گیا۔امریکہ کے اس وقت کے صدر رچرڈ نکسن نے عارضی طور پر ڈالر کے عوض سونے کی تبدیلی کے معاہدے کو منسوخ کردیا اور یوں برٹین ووڈز معاہدہ عملی طور پر ختم ہو گیا۔ اب دنیا کا ہر ملک اپنی کرنسی کا ایکسچینج ریٹ متعین کرنے میں آزاد ہوا اور کرنسی سونے سے منسلک بھی نہ رہی۔چنانچہ اب کسی بھی کرنسی کی قدر جانچنے کا پیمانہ ڈالر یا اس کے مساوی سونے سے منسلک نہیں رہا تھا بلکہ اس کرنسی کا عالمی مارکیٹ میں استعمال یا اس کی طلب، ڈیمانڈ ہی اس کی قدر متعین کرتا تھا۔یعنی اب یہ بات اہم ہو گئی تھی کہ آپ کی کونسی کہاں کہاں استعمال ہو سکتی ہے اوراس سے کیا کچھ خریدا جا سکتا ہے۔اس تناظر میں امریکی ڈالروہ کونسی تھی جس سے آپ اس صدی کی سب سے اہم چیز تیل خرید سکتے تھے ۔اس لئے اب بھی زیادہ ممالک نے اپنے زر مبادلہ کے زیادہتر ڈالر میں ہی رکھے تا کہ وہ عرب ممالک سے اس کے بدلے تیل خرید سکیں۔اس کے علاوہ امریکی بالا دستی کی ایک اہم وجہ اور بھی ہے۔ خوشحال ممالک کے زرمبادلہ کے ذخائر تو زیادہ ہوتے ہیںجبکہ تجارت کے لئے وہ اس میں سے ایک مخصوص رقم ہی استعمال کرتے ہیں۔جیسے اگر ایک خوشحال ملک کے زرمبادلہ کے ذخائرایک سو ارب ڈالر کے ہوں گے تو وہ اس میں سے بیس ارب ڈالرہی تجارت کے لئے استعمال کر رہا ہو گا، اور اس کے پاس باقی کے اسی ارب ڈالراضافی ہوں گے۔ جس طرح ہم اپنے بچائے ہوئے پیسے کو جمع کرنے کے بجائے انہیںسٹاک مارکیٹ،سیونگ سرٹیفیکیٹ یا بانڈز کی صورت سرمایہ کاری میں استعمال کرنا پسند کرتے ہیں ، اسی طرح ملک بھی اپنے اضافے زرمبادلہ کے ذخائرکی امریکی ٹریژری بانڈز میں سرمایہ کاری کرتے ہیں۔ یہ ٹریژری بانڈز امریکی حکومت کی طرف سے جاری کئے جاتے ہیں اور مختلف ممالک اس میںاس غرض سے سرمایہ کاری کرتے ہیں کہ انہیں مستقبل میں اس سرمایہ کاری پہ معقول منافع ملے گا۔ امریکی فیڈرل ریزرو اور یو ایس ڈیپارٹمنٹ آف ٹریژری کے مطابق مئی 2022تک دوسرے ممالک نے امریکی ٹریژری سیکورٹی سمیت تقریبا سات اشاریہ چار7.4 ٹریلین امریکی ڈالر رکھے ہوئے ہیں۔یہ اتنی بڑی رقم ہے کہ فرانس، انڈیا اور روس کے مشترکہ GDPسے بھی زیادہ ہے۔اس بے شمار پیسے کی بدولت امریکہ معاشی ترقی، دفاعی اخراجات ، صنعتی پیداوار اور بڑے بڑے مالیاتی اداروں، ورلڈ بنک، آئی ایم ایف کو فنڈ دینے کا ایک اضافی فائدہ بھی موجودہے۔ان بے شمار وسائل کے ساتھ امریکہ کو دوسرے ممالک پر ایک فیصلہ کن انداز میں غیر منصفانہ کنٹرول بھی حاصل ہو جاتا ہے۔اگر کوئی ملک امریکہ کی مرضی کے خلاف چلنے کی کوشش کرے توامریکہ میںموجود ان کے ڈالر کے ذخائرکو منجمد بھی کر دیا جاتا ہے۔یوں دنیا کی سب سے طاقتور کرنسی امریکی ڈالرہے ، امریکہ اس کو کنٹرول کرتا ہے اوراس کی بیک پہ امریکہ پہ اس کی مقررہ مقدار میں سونا محفوظ رکھنے کی کوئی پابندی بھی نہیں ہے اور اسی بنیاد پر امریکہ کو دنیا میں سپر پاور کی حیثیت ہے۔دنیاکے چند ممالک تجارت کے لئے آپس میںاپنی لوکل کرنسی استعمال کرنا شروع ہو گئے ہیں لیکن عالمی تجارت میں امریکی ڈالرکی ضرورت اور دنیا کے معاشی نظام میںامریکی اس کی برتری آج بھی سب کرنسیوں پر فیصلہ کن برتری کی حامل ہے۔