افغانستان: شدید بارشوں کے بعد آنے والے سیلاب کے نتیجے میں خواتین اور بچوں سمیت 37 افراد ہلاک

 کابل (مانیٹرنگ ڈیسک)افغانستان کے مختلف صوبوں میں شدید بارشوں کے بعد آنے والے سیلاب کے نتیجے میں خواتین اور بچوں سمیت 37 افراد ہلاک ہو گئے۔غیرملکی خبر رساں ایجنسی کے مطابق افغانستان میں شدید بارشوں کے بعد دور دراز علاقوں میں خراب انفرااسٹرکچر کے نتیجے میں شدید نقصان پہنچا ہے اور اطلاعات تک رسائی نہ ہونے کی وجہ سے مشکلات میں مزید اضافہ ہوگیا ہے۔صوبائی گورنر کے ترجمان جیلانی فرہاد نے بتایا کہ اتوار سے صوبہ ہرات میں آنے والے طاقتور سیلاب کے نتیجے میں 24 افراد ہلاک ہو گئے۔صوبے کے کئی اضلاع میں ہزاروں ایکڑ کی فصل تباہ ہو گئی جبکہ مویشیوں کا بھی نقصان ہوا۔جیلانی فرہاد کے مطابق سب سے زیادہ متاثر ضلع ادرسکن ہوا جہاں چار بچوں اور ایک خاتون سمیت 12 افراد ہلاک ہو گئے۔انہوں نے کہا کہ کسانوں کی ہزاروں ایکڑ پر لگی فصل اور باغات تباہ ہو گئے جبکہ سیکڑوں مویشی بھی سیلاب کی نذر ہو گئے۔صوبائی انتظامیہ نے متاثرہ اضلاع میں صورتحال پر قابو پانے اور امدادی کارروائیاں تیز کرنے کے لیے ایمرجنسی رسپانس کمیٹی قائم کردی ۔مغربی صوبے غور کے گورنر عبدالطاہر فائز زادہ کے مطابق سیلابی ریلوں کی زد میں آ کر 6 بچوں سمیت 10 افراد ہلاک ہو گئے۔انہوں نے کہا کہ سیلاب کے نتیجے میں غور کے 163 مکانوں کو جزوی طور پر نقصان پہنچا ہے جبکہ 910 افراد نقل مکانی پر مجبور ہو گئے۔افغانستان کی وزارت نیشنل ڈیزاسٹر کے ترجمان تمیم عاظمی نے کہا کہ ملک بھر کے مختلف صوبوں میں 405 خاندان نقل مکانی پر مجبور ہو گئے جبکہ کچھ جگہ سیلاب دریا بھر جانے کی وجہ سے آیا۔انہوں نے مزید بتایا کہ شمالی صوبے ثمن گن میں 10 گاڑیاں سیلابی ریلے میں پھنس گئیں جبکہ تین افراد ہلاک بھی ہوئے۔