سکردو،بجلی کی طویل بندش کے خلاف ہزاروں افراد کا احتجاجی مظاہرہ، دھرنا

بجلی کی طویل ترین بندش کے خلاف گمبہ سکرسدو میں ہزاروں لوگ سڑکوں پر نکل آئے اور ہڑتال کرکے بجلی کی طویل ترین لوڈشیڈنگ کے خلاف دھرنا دیا مظاہرین نے محکمہ برقیات کے خلاف شدید نعرے بازی کی دھرنے کے باعث گمبہ سکردو میں ٹریفک کانظام درہم برہم ہوکررہ گیا مظاہرین نے کہاکہ گمبہ سکردو اور اس کے گردونواح میں بجلی کی بندش کی وجہ سے نظام زندگی مفلوج ہوکر رہ گیاہے کبھی پانی ہونے کبھی مشین خراب ہونے کا بہانا بناکر بجلی بند کردی جاتی ہے ایسا محسوس ہوتاہے کہ سکردو میں انتظامیہ نام کی کوئی شے نہیں ہے یہاں جنگل کاقانون چل رہاہے کئی کئی روزبجلی بند ہونے کے باوجود انتظامیہ ٹس سے مس نہیں ہوتی ہے لگتا ہے کہ انتظامیہ بھنگ پی کر سوگئی ہے دن بھر دھرنا جاری رہنے کے باوجود انتظامیہ کا مظاہرین کے پاس تاخیر سے آنا اس بات کا ثبوت ہے کہ انتظامیہ مسائل کے حل میں سنجیدہ ہی نہیں ہے یہاں مسائل کی بنیادی وجہ انتظامیہ کی غفلت اور لاپرواہی ہے مظاہرین نے کہاکہ ہمارے صبر کا پیمانہ لبریز ہوگیاہے اب کسی قسم کی ڈیل نہیں ہوگی بجلی دے کرہی ہمیں خاموش کرایا جاسکتاہے دریں اثناء  اسسٹنٹ کمشنر سید شہریار شیرازی نے دھرنے کے شرکاء سے طویل مذاکرات کرکے دن بھر جاری رہنے والے دھرنے کو شام کے وقت ختم کرادیا اور دھرنے کے منتظمین کے چارٹرآف ڈیمانڈ کو منظور کرنے کی یقین دہانی کرادی اے سی کی یقین دہانی پر مظاہرین منتشر ہوگئے ادھر وزیر برقیات مشتاق حسین نے کہاہے کہ بجلی کی قلت سے عوام کو درپیش مسائل کا پوری طرح سے ادراک ہے ہمیں عوام کی مشکلات کا احساس ہے مگر یہ حقیقت ہے کہ بجلی بحران کی اصل ذمہ دار سابق حکومتیں ہیں مسلم لیگ ن اور پیپلزپارٹی نے بجلی کی پیداوار بڑھانے کیلئے کوئی سنجیدہ کوشش نہیں کی ہم پہلی مرتبہ بجلی بڑے منصوبے لیکر آرہے ہیں انشاء اللہ سومیگاواٹ بجلی پیدا کرنے کا ہدف حاصل کرنے میں ہم کامیاب ہونگے کچھ عرصہ مشکلات ہونگی مگر مستقبل بجلی کے حوالے سے شاندار اور تابناک ہے یہاں توانائی کا بحران جلد ختم ہوگا