ینگ ڈاکٹرز کا مستقلی، رسک الاونس کیلئے آج سے دھرنے کا اعلان

 ینگ ڈاکٹرز ایسوسی ایشن گلگت بلتستان ڈاکٹر اعجاز ایوب نے کہا ہے کہ ٹریننگ پالیسی 2019 میں منظور ہوئی تھی ، ، جس میں بعد ازاں کچھ ترامیم کی گئی تھیں وہ بھی دفاتر کے چکر لگوا کر اور احتجاجی مظاہروں کے بعد۔ اس کے باوجود عملدرآمد نہیں ہوا ۔بہت سارے ڈاکٹرز پوسٹ گریجویشن ٹریننگ کے لئے داخلہ لیکر ہیلتھ ڈیپارٹمنٹ سے نومنیشن لیٹر اور این او سی کے منتظر ہیں۔ لہذا جلد از جلد اس پر عملدرآمد کیا جائے اپنے بیان میں انہوں نے کہا کہ الاؤنس پیکیج کا باظابطہ نوٹیفکیشن نہیں کیا گیا ہے ، فائل وزیر اعلی سیکرٹریٹ میں بد نیتی کی وجہ سے تعطل کا شکار ہے۔انہوں نے کہا کہ کنٹریکٹ پر تعیناتی اور توسیع والا کام آٹھ سال سے چل رہا ہے ، جن کی ٹریننگ مکمل ہوئی ہے وہ کئی سال پہلے سے اسی طرح سپیشلسٹ کیڈر میں کام کرتے چلے آ رہے ہیں اور جو تربیت حاصل کر رہے ہیں وہ اس وقت قلیل تنخواہ پر مختلف صوبوں میں گزر بسر کرنے پر مجبور ہیں۔ انہوں نے کہا ہے کہ محکمہ صحت کی پریس ریلیز سے صاف ظاہر ہوتا ہے کہ کنٹریکٹ ڈاکٹروں کی مستقلی اور پوسٹ گریجویشن ٹریننگ کے لئے وظائف دینے کا فی الحال کوئی ارادہ نہیں ہے۔حالانکہ وزیر اعلیٰ نے ینگ ڈاکٹرز ایسوسی ایشن کے وفد سے ملاقات کرتے وقت یہ وعدہ کیا تھا کہ ڈاکٹروں کو جلد مستقل کرینگے اور ان کے لئے بجٹ میں پوسٹ گریجویشن ٹریننگ کے لئے وظائف بھی مقرر کرینگے لیکن یہ سب تا حال اعلانات کی حد تک محدود ہے اور اس پر کوئی نوٹیفکیشن نہیں نکالا گیا ہے۔انصاف پر مبنی پوسٹنگ ٹرانسفر پالیسی بنا کر تمام اضلاع میں ڈاکٹروں کو باری باری پوسٹنگ یا روٹیشن پر بھجوانے کے وعدے بھی دھرے کے دھرے رہ گئے ہیں۔ تا حال جو نوٹیفکیشن نکالا گیا ہے وہ ہے صدر ینگ ڈاکٹرز ایسوسی ایشن گلگت بلتستان کے اسکردو آر ایچ کیو میں پوسٹنگ آرڈرز ( جہاں پہلے سے ہی 3 ماہر امراض قلب کے ڈاکٹر موجود ہیں) جو کہ انتقامی کارروائی ہے۔ ڈاکٹر اعجاز ایوب نے کہا کہ حالیہ احتجاج اور ہڑتال کے پیچھے ہمارے اہم مطالبات ہیں کہ وزیر اعلی کے وعدے کے مطابق ڈاکٹروں ،نرسسز اور پیرا میڈیکل اسٹاف کی مستقلی ایکٹ 2020 کو اسمبلی سے پاس کر کے اس پر گورنر سے دستخط کے ذریعے منظوری دی جائے۔پوسٹ گریجویشن ٹریننگ پالیسی 2021 پر عملدرآمد اور وزیر اعلیٰ کے وعدے کے مطابق پوسٹ گریجویشن ٹریننگ کے لئے سالانہ 30 ڈاکٹروں کے لئے وظائف کا نوٹیفکیشن جاری کیا جائے انہوں نے کہا کہ حالیہ تمام غیر قانونی تبادلوں کی منسوخی اور تمام ڈاکٹروں کے لئے یکساں انصاف پر مبنی پوسٹنگ ٹرانسفر پالیسی۔ جس کے بعد نئے سرے سے ڈاکٹروں کی پوسٹنگ عمل میں لائی جائے اور اس پر ہر صورت عملدرآمد کروایا جائے۔ پے پیکیج فائنانس ڈیپارٹمنٹ سے نوٹیفکیشن اور جولائی 2020 سے اب تک رسک الاونس کی کابینہ منظوری دے اور اس کو تنخواہوں میں ضم کرے۔ ان مطالبات کے لئے ماضی میں کئی بار پریس کانفرنس کی گئیں۔ کئی دفعہ احتجاج بھی کیا لیکن حکومت ہمیشہ وعدہ خلافی کرتی رہی اور صرف تسلیاں ہی دی گئی ہیں۔ جس کی وجہ سے تمام ینگ ڈاکٹرز نے احتجاجا مستعفی ہو کر ہڑتال کا اعلان کیا اور اس ظلم و زیادتی کے خلاف دھرنا دینے کا فیصلہ کیا ہے جو کل 12 جولائی سے شروع ہوگا اور تمام مندرجہ بالا مطالبات کی منظوری/ نوٹیفکیشن تک جاری رہے گا۔