ن لیگ، کشمیر کے انتخابی نتائج کے خلاف تحریک چلانے کا اعلان

مسلم لیگ (ن) نے آزاد کشمیر الیکشن میں پری پول رگنگ کا الزام عائد کرتے ہوئے نتائج کو ماننے سے انکار  اور احتجاجی تحریک چلانے کا اعلان کردیا ہے دوسری جانب وفاقی حکومت نے  الزامات کو مسترد کرتے ہوئے کہا ہے کہ ن لیگ شکست کو تسلیم کرے،مظفر آباد میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے لیگی رہنماؤں کا کہنا تھا کہ پیسہ بانٹ کر ووٹ چوری کیا گیا۔ انتخابی عمل ریاستی قبضے میں ہونا بدقسمتی ہے۔ 25 جولائی کو جمہوریت ہاری، وہی کچھ ہوا جو 2018ء میں ہوا تھا۔ '' ڈمی وزیر اعظم'' لا کر ریاست کو صوبہ بنانے کی باتیں کی جا رہی ہیں۔ غیر نمائندہ حکومت کشمیر کاز کو کس طرح آگے بڑھائے گی؟شاہد خاقان عباسی کا کہنا تھا کہ آزاد کشمیرکے سیاسی ماحول اور روایات پر حملہ کیا گیا۔ پیسے کے بل بوتے پر لوگوں کو اقتدار میں لانے کی کوشش ہو رہی ہے۔ ہم اس الیکشن کو مسترد کرتے ہوئے اسے کشمیر کے حقوق پر ڈاکہ سمجھتے ہیں۔ان کا کہنا تھا کہ صوبہ بنانا اقوام متحدہ کی قراردادوں کی نفی ہے۔ آزاد کشمیر میں کھلا حملہ کیا گیا ہے۔ وہی بات ہوئی جس کا ہمیں خدشہ تھا۔ سابق امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے جس ثالثی کا کہا تھا، وہ بات نظر آئی ہے۔انہوں نے کہا کہ یہ ملک کی بدنصیبی ہے کہ الیکشن کو شفاف نہیں بنا سکے۔ یہ آزاد کشمیر اور پاکستانی عوام کے لیے لمحہ فکریہ ہے۔ الیکشن میں جمہوری اقدار کو تباہ کیا گیا۔اس موقع پر آزاد کشمیر کے سابق وزیراعظم راجہ فاروق حیدر کا کہنا تھا کہ عمران خان نے آزاد کشمیر کے ساتھ کھلواڑ کیا۔ وزرا نے الیکشن میں اربوں روپے کے پیکجز کا اعلان کیا۔ یہ عمران خان نہیں بلکہ پیسے کا ووٹ ہے۔راجہ فاروق حیدر نے الیکشن میں دھاندلی کا الزام لگاتے ہوئے پورے آزاد کشمیر اور بیرون ملک تحریک چلانے کا اعلان کیا۔دوسری جانب  وفاقی وزیر اطلاعات فواد چوہدری نے مسلم لیگی رہنماؤں کی پریس کانفرنس پر ردعمل دیتے ہوئے کہا ہے کہ حکومت آپ کی، پولیس بھی آپ کے ماتحت، پھر بھی دھاندلی کا الزام، ن لیگ آزاد کشمیر می شکست تسلیم کرے۔فواد چوہدری نے سوال اٹھایا کہ آزاد کشمیر میں وزیراعظم اور الیکشن کمشنر (ن) لیگ کا، پھر دھاندلی کون کر سکتا ہے؟ جہاں اپوزیشن ہار جائے وہاں دھاندلی کا شور مچاتی ہے۔ مسلم لیگ (ن) کو چاہیے کہ وہ آزاد کشمیر الیکشن میں اپنی شکست کو تسلیم کرے۔ ان کا کہنا تھا کہ ملکی معاملات پر اپوزیشن اور حکومت کو ایک پیج پر ہونا چاہیے۔ اپوزیشن انتخابی اصلاحات کے حوالے سے تجاویز لائے۔وفاقی وزیر اطلاعات نے بتایا کہ اپوزیشن کے ساتھ معاملات بہتر طریقے سے آگے بڑھ رہے ہیں۔ نیب قوانین اور انتخابی اصلاحات پر اپوزیشن سے بات کرنا چاہتے ہیں۔ انتخابی اصلاحات پر پارلیمانی کمیٹی مزید کام کرے گی،انہوں نے بتایا کہ وزیراعظم عمران خان نے کامیاب انتخابی مہم پر وزرا کو مبارکباد دیتے ہوئے آزاد کشمیر میں دو کارکنوں کی ہلاکت پر تحقیقات کا حکم دیا ہے۔