آٹاکوٹے میں کمی کا مسئلہ حل کرلیا جائے گا، مشیر خوراک

صوبائی مشیر خوراک شمس لون نے کہا ہے کہ پنجاب کابینہ کی جانب سے منظوری ملنے کے بعد گلگت بلتستان کے لئے گندم کی فراہمی یقینی ہوجائے گی اور معیاری گندم فراہم ہوگی ، گندم اور آٹا کوٹے میں کمی کے حوالے سے جو مسائل ہیں ان کو حل کیا جائے گا۔  ان خیالات کا اظہار انھوں نے جماعت اسلامی گلگت بلتستان کے امیر مولانا عبد السمیع اور  جنرل سیکریٹری نظام الدین  سے ملاقات میں گفتگو کرتے ہوئے کیا ،جماعت اسلامی کے رہنمائو ں نے گندم بحران اور آٹے کے کوٹے میں کمی سمیت گلگت شہر میں بڑھتی ہوئی آبادی کے تناسب سے بات کرتے ہوئے مشیر خوراک کو کہا کہ گلگت شہر میں روز بروز آبادی بڑھ رہی ہے گلگت شہر کا کوٹہ سو فیصد کیا جائے اور معیاری گندم فراہم کی جائے، گلگت بلتستان کے دور افتادہ علاقوں میں عوام کو گندم کے بحران کا سامنا ہے اس بحران کے خاتمے کے لئے اقدام اٹھایا جائے تاکہ گلگت بلتستان کے عوام کو گندم کے بحران سے نکالا جاسکے۔ وفد سے گفتگو کرتے ہوئے مشیر خوارک شمس لون نے کہا کہ کابینہ اجلاس میں اس بات پر فیصلہ ہوچکا ہے کہ گندم کی خریداری پنجاب سے ہوگی اور پنجاب کابینہ سے منظوری ملتے ہی معیاری گندم کی فراہمی شروع ہوجائے گی، اس کے علاوہ گلگت بلتستان کے دور افتادہ علاقوں میں بھی بروقت گندم کی فراہمی کے لئے اقدامات اٹھائے جارہے ہیں گلگت شہر کی آبادی کو مد نظر رکھتے ہوئے  آٹے کے کوٹے  کے حوالے سے جو بھی مسائل ہیں ان کو بھی حل کیا جائے گا۔ انہوں نے کہا کہ صوبائی حکومت گلگت بلتستان میں گندم سمیت دیگر مسائل کو بھی حل کرنے کے لئے اقدامات اٹھارہی ہے بہت جلد تمام مسائل کا سدباب ہوگا۔ جماعت اسلامی کے وفد نے مشیر خوراک کی جانب سے مسائل کے حل کی یقین دہانی پر شکریہ ادا کیا اور امید ظاہر کی کہ عوام کے مسائل کو موجودہ حکومت فوری حل کرنے میں کردار ادا کرے گی۔