گلگت بلتستان،،بھرتیوں کیلئے عمر کی حد چالیس سال مقرر

 گلگت بلتستان حکومت نے بے روزگاری پر قابو پانے اور نوجوانو ںکو روزگار فراہم کرنے کے لئے بڑا قدم اٹھاتے ہوئے سرکاری محکموں میں بھرتیوں کے لئے عمر کی بالائی حد میں پانچ سال کا اضافہ کردیا ہے اور بھرتیوں کے لئے عمر کی حد35سال سے بڑھا کر40سال مقرر کردی گئی ہے،اس حوالے سے حکومت کی جانب سے بھیجی گئی سمری کی گورنر گلگت بلتستان راجہ جلال حسین مقپون نے منظوری دیدی ہے ،تفصیلات کے مطابق صوبائی حکومت نے خطے کے نوجوانوں کو روزگار فراہم کرنے کے لئے بڑا قدم اٹھاتے ہوئے بھرتیوں کے لئے عمرکی بالائی حد میں اضافہ کردیا ہے ،اور گورنر گلگت بلتستان راجہ جلال حسین مقپون نے سرکاری  محکموں میں بھرتیوں کے لئے عمر کی بالائی حد 35 سال سے بڑھا کر 40 سال مقرر کرنے کی سمری پر دستخط کردیئے ہیں ،سمری پر دستخط کے موقع پر گورنر گلگت بلتستان راجہ جلال حسین مقپون کا کہنا تھا کہ دنیا بھر کے ساتھ پاکستان میں بھی کرونا کی وباء کے باعث نوجوانوں کو ملازمتوں کے حصول میں مشکلات کا سامنا ہے، ان مسائل پر قابو پانے کے لئے صوبائی حکومت کے ساتھ مشاورت کے بعد عمر کی بالائی حد کو 35 سے بڑھا کر 40 مقرر کیا گیا ہے، گورنر نے کہا کہ گلگت بلتستان سے تعلق رکھنے والے 35 سال کی عمر سے زائد بیروزگار نوجوانوں کو ملازمتوں کے حصول کا موقع ملے گا،واضح رہے کہ گلگت بلتستان کے نوجوان کافی عرصے سے بھرتیوں کے لئے عمر کی حد میں اضافے کا مطالبہ کررہے تھے اور مختلف فورمز پر یہ معاملہ اٹھایا جارہا تھا،گلگت بلتستان کمپیٹیو امتحان میں حصہ لینے والے امیداواروں نے عمر کی حد میں اضافے کے لئے گلگت،اسلام آباد میں مظاہرہ بھی کیا تھا،اس وقت وزیراعلیٰ نے یقین دہانی کرائی تھی کہ قوانین کا جائزہ لے کر اس حوالے سے کوئی فیصلہ کیا جائے گا،جس کے بعد وزارت قانون اور دیگر متعلقہ حکام کے ساتھ مشاورت کے بعد حکومت نے سرکاری محکموں میں بھرتیوں کے لئے عمر کی بالائی حد میں 5سال اضافہ کا فیصلہ کیا اور اس سلسلے میں سمری گورنر گلگت بلتستان کو ارسال کی گئی جس کی جمعرات کو گورنر نے منظوری دے دی،سمری کی منظوری سے 40سال کی عمرتک کے افراد سرکاری اسامیوں پر تقرری کیلئے اپلائی کرنے کے اہل ہوگئے ہیں اور آئندہ دنوں میں خالی اور نئی تخلیق شدہ اسامیوں پر ہونے والی بھرتیاں نئے قانون کے تحت ہوں گی