Image

شاہ محمود قریشی کی پریس کانفرنس، چیف الیکشن کمشنر کا نوٹس

چیف الیکشن کمشنر سکندر سلطان راجہ نے سابق وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی کی پریس کانفرنس پر فوری نوٹس لے لیا ہے۔

ذرائع کے مطابق چیف الیکشن کمشنر نے شاہ محمود قریشی کے ضابطہ اخلاق کی خلاف ورزی کے الزامات پرصوبائی الیکشن کمشنر پنجاب سے فوری رپورٹ طلب کر لی گئی ہے۔

اس حوالے سے ذرائع کا کہنا ہے کہ چیف الیکشن کمشنر نے صوبائی الیکشن کمشنر پنجاب کو 24 گھنٹوں کے اندر رپورٹ پیش کرنے کا حکم دیا ہے۔چیف الیکشن کمشنر نے ہدایت کی کہ ملتان سمیت دیگر 19 حلقوں میں ضابطہ اخلاق کی خلاف ورزی ثابت ہونے پر قانون کے تحت سخت سے سخت کارروائی کی جائے، تمام کارروائی سے چیف الیکشن کمشنر کو فوری آگاہ کیا جائے۔پاکستان تحریک انصاف کے وائس چیئرمین نے کہا ہے کہ پنجاب حکومت الیکشن کمیشن کی ساکھ متاثرکرے گی، حمزہ شہباز اپنی وزارت اعلیٰ کے تحفظ کیلئے کچھ بھی کرسکتے ہیں، نظرآنے اورنہ آنے والے ہاتھ بھی پیچھے ہیں، 14 ڈی پی اوز کو ہدایات دی گئیں کہ وزیراعلیٰ پنجاب حمزہ شہباز کا مستقبل ضمنی انتخابات کے ساتھ جڑ اہے۔

پی ٹی آئی کی رہنما ڈاکٹر یاسمین راشد اور سابق وفاقی وزیر حماد اظہر کے ہمراہ پریس کانفرنس کرتے ہوئے سابق وفاقی وزیر خارجہ نے کہا کہ ضمنی انتخابات سے قبل حکومت اپنی مشینری کا استعمال کر رہی ہے ، پریس کانفرنس میں تو ڈی سی کا عمل نہیں ہونا چاہئے مگر یہاں پر پریس کانفرنس بھی ڈی سی حضرات کروا رہے ہیں ، ملتان میں ایک شخص جو پی ٹی آئی سے وابستہ تھا اس پر دباؤ ڈالا گیا کہ پریس کانفرنس تمہارے یہاں کرنی ہے ۔ ملتان کے کاروباری طبقے کے ہاں افسران رات کے اوقات میں جاتے ہیں ، انہیں دھمکاتے نہیں ہیں بلکہ اچھی اردو میں پیار سے پیغام دیتے ہیں ، ظاہر ہے کاروباری طبقات کے ایف بی آر میں کچھ معاملات چل رہے ہوتے ہیں ۔