Image

گلگت بلتستان کی حدود میں خیبر پختونخوا پولیس کی پھر مداخلت

 ہزارہ پولیس کی گلگت بلتستان کے حدود میں پھر  مداخلت۔ بابوسر ٹاپ کے قریب دیامر انتظامیہ کی جانب سے لگائے گئے پکنک بینچ، سیلفی پوائنٹ کو اْکھاڑ کر پھینک دیا گیا۔گزشتہ ہفتے دیامر انتظامیہ نے بابوسر ٹاپ کے قریب دیامر کے حدود میں ٹوریزم کی سرگرمیوں کو فروغ دے کر سیاحوں کی سہولت کیلئے بنچ,ٹیبل اور سلفی پوائنٹ قائم کر دیا تھا ,جیسے گزشتہ سہہ پہر ہزارہ پولیس نے اْکھاڑ کر پھینک دیا ہے۔ہزارہ پولیس کی جانب سے گلگت بلتستان کے حدود میں مبینہ مداخلت کے خلاف دیامر کی عوام سراپا احتجاج ہیں اور حکومت سے ہزارہ پولیس کے خلاف ایف آئی آر درج کرنے کا مطالبہ کیا گیا ہے۔صدر تھک نیاٹ یوتھ قومی مومنٹ ضیاء اللہ تھکوی نے اس واقعے کی شدید الفاظ میں مذمت کرتے ہوئے ہزارہ پولیس کی گرفتاری کا مطالبہ کیا ہے اور اس مداخلت کے خلاف سخت رد عمل دینے کا بھی اعلان کیا ہے۔دیامر کے عوامی و سماجی حلقوں نے کہا کہ خیبر پختونخواہ حکومت ہربن تھور حدود میں دیامر کیساتھ زیادتی کرکے اب بابوسر میں بھی مداخلت پر اتر آئی ہے جس کے بھیانک نتایج برآمد ہونگے۔عوام اب خاموش نہیں رہ سکتے۔حکومت نوٹس لے۔