23

تبدیلی سرکار نے اہم منصوبے ختم کرکے ترقی روک دی،حفیظ الرحمن

سابق وزیر اعلی حافظ حفیظ الرحمان نے کہا ہے کہ تبدیلی سرکار نے پی ایس ڈی پی پراجیکٹس کو ختم کرکے عوام کا استحصال کیا ہے ترقیاتی کاموں کو ختم کرکے گلگت بلتستان کو پتھر کے دور میں دربارہ دھکیلا جارہا ہے۔میڈیا سے گفتگوکرتے ہوئے انہوں نے کہاکہ عوامی زمینوں کو عوامی ملکیت بنانے کے لئے ہماری کابینہ نے لینڈ ریفارمز ایکٹ منظور کیا جو کہ قابل عمل ایکٹ ہے جس کو اسمبلی سے پاس کرانے کی ضرورت ہے کیونکہ لینڈ ریفارمز ایکٹ میں گلگت بلتستان کے تمام سٹیک ہولڈرز کی مشاورت شامل ہے پاور پراجیکٹ کو پی ایس ڈی میں ہم نے شامل کرایا جس کو آج سیاست کی نذر کیا جارہا ہے جو کہ ہمارے ساتھ نہیں بلکہ گلگت بلتستان کی قوم کے ساتھ زیادتی ہے۔ میڈیا کے نمائندوں سے گفتگو کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ گلگت بلتستان کے عوام کو اس سے قبل محرومیوں میں رکھا گیا عوام کو لاشوں کے تحفے دئے گئے سب سے بڑا چیلنج ہمارے لئے قیام امن کا تھا اور ہم نے رات دن کام کرکے بین المذاہب ہم آہنگی کو فروغ دیا نو گو ایریاز کا خاتمہ کیا آج قیام امن کی بدولت گلگت بلتستان میں ہر شہری بلا خوف و خطر اپنے زندگی کے معاملات چلارہا ہے امن کے حوالے سے گلگت بلتستان دیگر صوبوں کے لئے آج قابل تقلید بنا ہے تو یہ سب مسلم لیگ (ن) کی حکومت کا کارنامہ ہے امن ہی سے ترقی سمیت زندگی کا ہر شعبے میں اصلاحات آسکتی ہیں اور ہم نے اپنی اولین ترجیحات سمجھ کر امن کے قیام کے لئے کام کیا جس کی بدولت آج گلگت بلتستان میں رونقیں بحال ہیں۔ انہوں نے کہا کہ تبدیلی سرکار کی مرکز میں بھی حکومت ہے اور گلگت بلتستان میں بھی حکومت ہے ان کو عوام کی فکر ہوتی تو آج اہم منصوبوں کو ختم نہیں کرتے یہ لوگ اقتدار کے بھوکے لوگ ہیں جنہوں نے آکر ہی عوامی نوعیت کے پراجیکٹس کو کینسل کردیا ہے جس پر ہم خاموش نہیں رہینگے ترقیاتی کاموں میں بھی سیاست کرکے عوام کو ان کے بنیادی حقوق سے محروم رکھنا انتہائی زیادتی ہے اس قسم کی زیادتی پر ہم کبھی خاموش نہیں رہیں گے اس وقت گلگت بلتستان اندھیرے میں ڈوبا ہوا ہے کسی کو خبر ہی نہیں ہے عوام پر مہنگائی کا بم گرایا گیا اب بیڈ گورننس کی انتہا کردی عوام کے منہ سے نوالہ چھینا جارہا ہے تبدیلی سرکار کو کس نے اب روکا ہے مرکز سمیت صوبے میں ان کی حکومت ہے تو گلگت بلتستان کے عوام کے جو مسائل ہیں ان کو حل کریں اور ترقیاتی کاموں کے خاتمے پر ہم خاموش نہیں رہینگے جن منصوبوں کو کینسل کردیا گیا ہے ان کو بحال کیا جائے پی ایس ڈی پی سے جن پراجیکٹس کو نکالا گیا ہے ان کو پی ایس ڈی میں شامل کرکے فوری کام شروع کیا جائے۔