48

سکردو حلقہ2،واٹرسپلائی سکیم کا ٹھیکہ حاصل کرنے کیلئے بااثرگروپ سرگرم

سکردو حلقہ نمبر2 کیلئے منظورشدہ واٹر سپلائی سکیم کا ٹھیکہ حاصل کرنے کیلئے بااثر ٹھیکداروں کا گروپ سرگرم ہوگیا چند روز قبل صوبائی وزیر زراعت محمد کاظم میثم کی مداخلت پر سات کروڑ روپے کی واٹر سپلائی سکیم کا ٹینڈر ملتوی کردیاگیا تھا صوبائی وزیر نے تجویز دی تھی کہ سات کروڑ روپے کی واٹر سپلائی سکیم کے مختلف حصے ہیں لہذا واٹر سپلائی سکیم کا ٹھیکہ ایک ٹھیکدار کو دینے کے بجائے ہر ایک حصے کا الگ الگ ٹینڈر کیا جائے اگر سات حصہ ہے تو سات ٹھیکداروں میں کام تقسیم کیا جائے تاکہ اس عمل سیمیرٹ یقینی ہونے کے ساتھ ساتھ منصوبے پر کام بھی بروقت مکمل کرایا جاسکے واٹر سپلائی کا ٹینڈرمختلف حصوں میں کرانے سے جہاں میرٹ کو یقینی بنانے اور کام کو بروقت مکمل کرانے میں مدد ملے گی وہیں ایک کے بجائے سات ٹھیکداروں کے چولہے جلیں گے اور کمزور ٹھیکداروں کی معیشت مستحکم ہوگی صوبائی وزیر کی مداخلت پر واٹر سپلائی سکیم کا ٹینڈر ملتوی کردیا گیا تھا تاہم ٹینڈر ملتوی ہونے کے بعد بااثر ٹھیکداروں نے ہاتھ پیر مارنا شروع کردئیے اور بااثر ٹھیکداروں نے وفاقی اور صوبائی حکومت کے بڑوں سے رابطے قائم کرلئے رابطوں کے نتیجے میں اب سات کروڑ روپے کی واٹر سپلائی سکیم کا ٹھیکہ ایک ٹھیکدار کو دینے کیلئے پس پردہ کوششیں شروع ہوگئی ہیں اور اس بابت معاملات تقریبا فائنل ہوگئے بتایاگیاہے کہ بلتستان میں سات کروڑ روپے کے ٹھیکوں پر کام صرف پانچ سے چھ ٹھیکدار ہی کرسکتے ہیں باقی ٹھیکدار معاشی طورپر اتنے مضبوط نہیں کہ وہ بڑے منصوبوں پر کام کرسکے سات کروڑوں روپے کا ٹھیکہ ایک ٹھیکدار کو ملنے سے باقی چھوٹے ٹھیکدار بیک فٹ پر چلے جائیں گے اور شفافیت بھی سوالیہ نشان بنے گی بتایاگیاہے کی واٹر سپلائی سکیم کا ٹھیکہ لینے کیلئے بااثر ٹھیکداروں نے صوبائی اور وفاقی حکومت کے اعلی عہدیداروں کو بھی موم کرلیاہے واٹر سپلائی سکیم کا ٹھیکہ ایک ٹھیکدار کو دینے کی نہ صرف چھوٹے ٹھیکدار مخالفت کررہے ہیں وہیں پی ٹی آئی کے عہدیدار بھی سخت مخالف ہیں پی ٹی آئی کے کئی عہدیداروں نے واٹر سپلائی سکیم کا ٹھیکہ ایک ٹھیکدار کو دینے کی کوششوں کو پارٹی کے خلاف بڑی سازش اور کرپشن کا سائنٹیفک طریقہ قرار دیا ہے اس طرح کی سرگرمیوں سے چھوٹے ٹھیکدار دیوالیہ ہونے کے ساتھ ساتھ شفافیت بھی سوالیہ نشان بن کر رہے گیــ