جہانگیر ترین گروپ کے رکن اسمبلی نذیر چوہان گرفتار، ضمانت پر رہائی کا حکم

لاہور پولیس نے معاون خصوصی برائے احتساب شہزاد اکبر کی درخواست پر جہانگیر ترین گروپ کے ایم پی اے نذیر چوہان کو گرفتار کر لیا ہے۔شہزاد اکبر نے نذیر چوہان کے خلاف درخواست دی تھی جس میں موقف اختیار کیا گیا تھا کہ  رکن پنجاب اسمبلی  نذیر چوہان نے نجی ٹی وی کے پروگرام میں ان کیخلاف نازیبا  زبان استعمال کرتے ہوئے الزامات عائد کئے  ہیں جس پر  نذیر چوہان کے خلاف تھانہ ریس کورس میں مقدمہ درج کیا گیا تھا۔پولیس نے عدالت نے نذیر چوہان کو عدالت میں پیش کیا، جہاں عدالت نے ان کی ضمانت ایک لاکھ کے مچلکوں کے عوض منظور کر لی۔عدالت نے فیصلے میں کہا کہ ملزم کے خلاف درج دفعات قابل ضمانت ہیں، اگر ملزم ایک لاکھ روپے کے مچلکے دے تو ضمانت پر رہا کر دیا جائے۔ اگر ملزم ضمانت پر رہا نہ ہو تو ملزم کو جوڈیشل ریمانڈ پر جیل بھیجا جائے۔ جس کے بعد مچلکے جمع ہونے سے قبل نذیر چوہان کو جیل بھجوا دیا گیا جہاں انہیں جیل کے ہسپتال منتقل کر دیا گیا ہے۔  ملزم کو جیل سے آئندہ سماعت پر 10 اگست کو پیش کیا جائے۔دوسری طرف نذیر چوہان کی گرفتاری پر جہانگیر ترین گروپ میں تشویش کی لہر دوڑ گئی۔ ترین گروپ نے نذیر چوہان کی گرفتاری کے بعد اجلاس طلب کر لیا ہے۔ ذرائع کے مطابق ارکین نے نذیر چوہان کا بھر پور ساتھ دینے کا فیصلہ کیا ہے۔