595

غذائی قلت

حماد علی

غذا کی متواتر فراہمی ایک بنیادی انسانی ضرورت اور حق ہے۔ بنی آدم کو ازل سے غذا کے حصول کے لئے تگ و دو کرنی پڑی ہے۔ غذائی قلت دنیا کو درپیش ایک سنگین مسئلہ ہے جسے دنیا کے ماہرین نے عصر حاضر میں ایک اہم توجہ طلب مسئلہ سمجھتے ہوئے گلوبل فوڈ سیکیورٹی کا نام دیا ہے اور درجہ بندی میں نیشنل سیکیورٹی سے اوپر رکھا ہے۔ خوراک کی کمی کی وجہ معاشی ماحولیاتی اور معاشرتی عوامل جیسے فصلوں کا نقصان ، زیادہ آبادی اور حکومتوں کی ناقص پالیسیاں ہیں، جودنیا کے بیشتراور بالخصوص ترقی پذیر ممالک میں غذائی قلت کے بڑے اسباب ہیں۔ ماحولیاتی عوامل کسی مخصوص جگہ پر پیدا ہونے والی فصلوں کا تعین کرتے ہیں ، معاشی عوامل خرید و پیداوار کی صلاحیت کا تعین کرتے ہیں اور سماجی سیاسی عوامل عوام میں خوراک کی تقسیم کا تعین کرتے ہیں۔ غذائی قلت طویل اور قلیل مدتی منفی اثرات کوپہنچ رہی ہے جس میں فاقہ کشی ، غذائیت کی کمی ، شرح اموات میں اضافہ اور سیاسی بدامنی شامل ہیں۔ ہنگامی اور طویل مدتی اقدامات دونوں کا استعمال کرتے ہوئے غذائی عدم تحفظ کے مسئلے کو اجتماعی طور پر حل کرنے کی ضرورت ہے۔غذائی قلت کا سبب بننے میں متعدد معاشرتی عوامل شامل ہیں۔ آبادی میں اضافے کی شرح کھانے کی پیداوار میں اضافے کی شرح سے کہیں زیادہ ہے۔ دنیا اپنی پیداوار سے زیادہ غذا استعمال کر رہی ہے جس کی وجہ سے فوڈ اسٹاک اور اسٹوریج کی سطح میں کمی واقع ہوئی ہے اور درمیانے درجے کی طلب میں اضافے کی وجہ سے کھانے کی قیمتوں میں اضافہ ہوا ہے۔ بڑھتی آبادی کے نتیجے میں انسانی آباد کاری کے لئے زرعی اراضی کو استعما ل کرنا پڑتا ہے جس سے غذائی قلت میں اظافہ ہوتا۔ انسانی آباد کاری کے لیے جنگلات کی تباہی نے موسمیاتی تبدیلیاں پیدا کی ہیں ، جیسے طویل خشک سالی اور صحرا۔ آبادی میں اضافے کا مطلب زیادہ آلودگی ہے کیونکہ لوگ کاروں ، صنعت اور گھریلو کھانا پکانے میں ایندھن کا استعمال زیادہ کرتے ہیں۔ اس کے نتیجے میں ہوا اور آلودگی میں اضافہ ہوتا ہے جس سے آب و ہوا اور خوراک کی پیداوار متاثر ہوتی ہے۔ماحولیاتی عوامل کھانے کی قلت پر بہت زیادہ اثرانداز ہوئے ہیں۔ موسمیاتی تبدیلیوں نے زرعی پیداوار کو کم کردیا ہے۔ آب و ہوا میں تبدیلی بڑی حد تک انسانی سرگرمیوں اور کچھ حد تک قدرتی سرگرمیوں کی وجہ سے ہوتی ہے۔ پاور پلانٹس ، موٹر ٹرانسپورٹ اور کوئلے اور تیل کی کان کنی کے ذریعہ بڑھتی آبادی کی وجہ سے ایندھن کی طلب میں اضافہ سے گرین ہاؤس گیسوں کا اخراج ہوتا ہے جس نے عالمی آب و ہوا کو بدستور متاثر کیا ہے۔ انسانی دباؤ کی وجہ سے جنگلات کی کٹائی نے آب و ہوا کے نمونوں اور بارش کے موسموں کو تبدیل کردیا ہے اور صحرا کے رقبہ میں اضافہ کی وجہ بنے ہیں جو زراعت کی پیداوار کی حمایت نہیں کرتے۔ آلودگی مختلف شکلوں میں ہوتی ہے۔ ان میں فضائی آلودگی اور زمینی آلودگی شامل ہیں۔ بڑھتی آبادی کے دباؤ کی وجہ زرعی اراضی کی کمی اور جنگلات کی کٹائی میں اضافہ ہوا ہے، مٹی کے کٹاؤ کی وجہ سے زرعی اراضی کے رقبہ اور زرخیزی میں کمی واقع ہوئی ہے۔ کاشتکاری اور مٹی کے ذرات میں اضافہ و آبی آلودگی کا باعث بنا ہے۔ بڑھتی ہوئی انسانی سرگرمیوں کی وجہ سے زمین کے بگاڑ نے زرعی پیداوار پر منفی اثر ڈالا ہے۔ قدرتی آفات جیسے سیلاب ، طوفان اور طویل خشک سالی میں اضافہ ہورہا ہے اور خاص طور پر ترقی پذیر ممالک میں غذائی تحفظ پر تباہ کن اثرات مرتب ہوئے ہیں۔ خشک سالی دنیا میں غذائی قلت کی سب سے بڑی وجہ ہے ، کیونکہ مسلسل برسوں کی خشک سالی کے نتیجے میں افریقہ اور وسطی امریکہ میں فصلوں ، مویشیوں کا نقصان ہوا ہے۔ حالیہ سیلابوں نے بہت سارے لوگوں کو بے گھر کردیا ہے ، جس نے پاکستان اور ہندوستان کے کئی حصوں اور تیسری دنیا کے کئی ممالک میں فصلوں اور جانوروں کو تباہ کردیا ہے۔بہت سے معاشی عوامل ہیں جو خوراک کی قلت میں کردار ادا کرتے ہیں۔ معاشی عوامل کاشتکاروں کی زرعی پیداوار میں مشغول ہونے کی صلاحیت کو متاثر کرتے ہیں۔ ترقی پذیر ممالک میں غربت کی صورتحال نے خوراک پیدا کرنے کی صلاحیت کم کردی ہے کیونکہ بیشتر کسان بیج اور کھاد کے حصول متحمل نہیں ہوسکتے ہیں۔ وہ کھیتی باڑی کے ناقص طریقے استعمال کرتے ہیں جو غذائی پیداوار میں خاطر خواہ اضافہ نہیں کرسکتے ہیں۔ چاول اور دیگر بنیادی اجناس کے بڑھتے ہوئے اخراجات نے اکثریتی غریبوں کے لئے کھانا دستیاب کرنا بھی ناممکن بنا دیا ہے۔ زرعی تحقیق پر ترقی پذیر ممالک میں سرمایہ کاری بہت کم ہے۔ ترقی پذیر ممالک کے کسانوں نے پرانی کاشتکاری کے طریقوں ، کم پیداوار والے بیجوں اور ناقص زرعی انفراسٹرکچر کا استعمال جاری رکھا ہوا ہے جو ان کی پیداواری صلاحیت کو محدود کرتے ہیں حالیہ عالمی مالیاتی بحران کی وجہ سے اشیائے خوردونوش کی قیمتوں میں اضافہ ہوا ہے اور ترقی یافتہ ممالک میں افراد اور حکومتوں کے ذریعہ زراعت میں سرمایہ کاری میں کمی آئی ہے جس کے نتیجے میں خوراک کی پیداوار میں کمی واقع ہوئی ہے کھانے کی کمی کے متعدد قلیل مدتی اثرات ہیں۔ بچوں ، ماؤں اور بوڑھوں پر اثرات بہت واضح ہیں جیسا کہ غذائیت اور بھوک سے متعلق اموات میں دیکھا جاتا ہے۔ اس سے اسکول جانے والے بچوں کی تعداد میں کمی اور کھیل کے میدان اور سماجی سرگرمیاں بھی کم ہوتی ہیں جو ان کی نشوونما کے لئے ضروری ہیں۔ ماؤں کی توانائی کم ہونے کی وجہ سے وہ اپنے نوزائیدہ بچوں کی دیکھ بھال کرنے سے قاصر ہیں۔ بچے قلیل مدت میں بھوک کا شکار ہوجاتے ہیں کیونکہ وہ فاقہ کشی طویل عرصے تک برداشت نہیں کرسکتے ہیں اور ہنگامی امداد کی آمد سے قبل ہی ان کی موت واقع ہوجاتی ہے۔ صومالیہ میں خانہ جنگیوں کی وجہ سے، کینیا اورایتھوپیا میں کئی سالوں کی خشک سالی کا اثر صومالی پناہ گزینوں پر پڑا ہے کیونکہ وہ خوراک اور حفاظت کے حصول کے لئے ملک سے فرار ہوچکے ہیں بے گھر ہونے والے صومالیوں میں سے بیشتر بچے انتہائی غذائیت کا شکار ہیں کیونکہ بیشتر فرار ہونے والے بڑے اور بچے راستے میں ہی موت کے منہ میں چلے گئے اور کچھ دن پناہ گزین کیمپ پہنچنے کے بعد۔خوراک کی کمی کے بھی طویل مدتی اثرات ہیں۔ ان میں نتیجہ کی طلب اور رسد کی اضافہ کی وجہ سے خوراک کی قیمتوں میں اضافہ بھی شامل ہے۔ ایندھن کی قیمتوں میں اضافے اور اناج پیدا کرنے والے خطوں میں مسلسل خشک سالی کی وجہ سے کھانے پینے کی پیداوار کی بڑھتی ہوئی لاگت نے دنیا میں کھانے کی قیمتوں میں اضافہ کیا ہے۔ تیل کی قیمتوں میں اضافے کی وجہ سے کھاد کی قیمت میں اضافہ ، خوراک کی نقل و حمل اور صنعتی زراعت کی لاگت بڑھ گئی ہے۔ ان عوامل کی وجہ دنیا کے متعدد ممالک میکسیکو ، کیمرون ، برازیل ، برکینا فاسو ، پاکستان ، مصر اور بنگلہ دیش ہندوستان میں غذائی قیمتوں میں اضافے کے باعث سیاسی عدم استحکام اور معاشرتی بدامنی پھیل گئی ہے۔غذا کی کمی کے مسئلہ کے کچھ قابل عمل حل موجود ہیں۔ کاربن کے اخراج اور آلودگی کو کم کرنے کی ضرورت ہے تاکہ اجتماعی اور انفرادی کوششوں کے ذریعہ نتیجہ خیز موسمی تبدیلی کو کم کیا جاسکے۔ گھروں اور صنعتوں میں شمسی ، جوہری اور جیوتھرمل پاور جیسی صاف توانائی میں سرمایہ کاری کرنے کی ضرورت ہے ، کیونکہ ان کے ماحول پر منفی اثرات مرتب نہیں ہوتے ہیں۔ امیر ممالک کو ماحول میں گرین ہاؤس کے اخراج کو مستحکم کرنے کے لئے غریب ممالک کو صاف اور قابل تجدید توانائی کی نشوونما اور استعمال میں مدد کرنی چاہیے۔ حکومتوں ، ماحولیاتی اداروں کو ورلڈ بینک اور اقوام متحدہ کے ساتھ مشاورت سے کام کرنے کی ضرورت ہے تاکہ سبزو شاداب ماحول کو فروغ دینے کے منصوبوں میں حصہ لیا جاسکے۔یہ بات بالکل واضح ہے کہ آبادی اور حکومت پر اس کے تباہ کن اثرات کے پیش نظر غذائی قلت ایک سنگین عالمی مسئلہ ہے  اور اس سے فوڈ سیکٹر میں موجود اداروں کی جانب سے فوری طور پر اقدامات اٹھانے کی ضرورت ہے۔ غذائی قلت کا اثر مختصر اور طویل مدتی ہوسکتا ہے۔ مختصر شرائط کے اثرات خواتین ، بچوں اور بوڑھوں کی آبادی پر زیادہ مرکوز ہیں جو طویل عرصے تک بھوک کا مقابلہ نہیں کرسکتے ہیں۔ اشیائے خوردونوش کی قلت کی وجوہات بخوبی واقف ہیں اور اگر اس مسئلے کو حل کرنے کے لئے مناسب اقدامات کیے جائیں اور موثر طریقے سے اس پر عمل درآمد کیا جائے تو ان کو حل کیا جاسکتا ہے۔ خوراک کی کمی کی ماحولیاتی کی کٹائی اور قانون سازی کے ذریعے قابو پایا جاسکتا ہے۔پاکستان میں طویل عرصہ سے مختلف سیا سی پارٹیاں مسند اقتدار پر فائز رہی ہیں'جن کی نعرے اور سیاست کا محور روٹی، کپڑا اور مکان ، ریاست مدینہ اور انسانی عزت پر رہا ہے۔ انکی توجہ اس بحران کی جانب بھی ہو ، حکمرانوں سے آخر میں اتنی سی گزارش ہے۔