Image

گندم قیمت بڑھانے کےلئے حکومت ،اپوزیشن متحد،8رکنی سلیکٹ کمیٹی قائم

گلگت بلتستان میں گندم کے نرخوں میں اضافے اور علاقے میں آمدن میں اضافے کےلئے حکومت اور اپوزیشن متحد ہوگئے، ڈپٹی سپیکر نذیر احمد ایڈووکیٹ نے گندم کے نرخوں میں اضافے کےلئے پالیسی بنانے اور سفارشات تیار کرنے کےلئے حکومت اور اپوزیشن کے 8 ممبران پر مشتمل سلیکٹ کمیٹی بنانے کا اعلان کرتے ہوئے ایک ہفتے کے اندر سفارشات تیار کرنے کی ہدایت کی ہے۔ جمعرات کے روز بجٹ اجلاس کے دوران خطاب کرتے ہوئے وزیراعلیٰ خالد خورشید نے کہاکہ پوری دنیا اور ملک میں معاشی بحران پیدا ہوچکا ہے، اس صورتحال میں ہمارے پاس گندم کے نرخوں میں اضافے کے علاوہ کوئی چارہ نہیں ہے چونکہ یہ ایک حساس مسئلہ ہے اس ایوان میں تمام جماعتوں کی نمائندگی ہے اس لئے اس پر بحث ہونی چاہیے اور یہ ایوان فیصلہ کرے کہ گندم کی سبسڈی کے مسئلے کو کیسے حل کرنا ہے۔ وزیر پلاننگ واطلاعات فتح اللہ خان نے کہاکہ ہمارے پاس دو راستے ہیں، پہلا راستہ یہ ہے کہ گندم کے نرخوں میں اضافہ کریں دوسرا راستہ یہ ہے کہ گندم کا کوٹہ کم کریں اور دونوں صورتوں میں لوگوں نے سڑکوں پر آنا ہے اور اس سلسلے میں جولائی کا مہینہ انتہائی حساس ہے۔ اس لئے ایوان اس مسئلے کا حل تلاش کرے۔ انہوں نے کہاکہ میں صوبائی وزیر ہوں مگر میں اور میرے دفتر کا گریڈ ون ایک ریٹ پر گندم خریدتے ہیں۔ یہ ظلم اور ناانصافی ہے۔ اس لئے ٹارگٹڈ سبسڈی ہونی چاہیے۔ غریبوں کو سبسڈی ملنی چاہیے جبکہ امیروں کو عام نرخ پر گندم فروخت ہونی چاہیے۔ انہوں نے کہا کہ ایک کروڑ پتی اور ایک غریب مزدور کو ایک نرخ پر گندم ملے یہ انصاف کے تقاضوں کے مطابق نہیں، اس کا حل تلاش کرنے کی ضرورت ہے۔ وزیر پانی وبجلی مشتاق احمد نے کہاکہ گندم کے نرخوں میں معقول اضافہ ہونا چاہیے۔ اپوزیشن لیڈر امجد حسین ایڈووکیٹ نے کہاکہ ہم گندم پر کبھی بھی سیاست نہیں کریں گے۔ حکومت گندم کے نرخوں میں اضافے کی پالیسی بنائے ہم ساتھ دیں گے۔ انہوں نے کہا کہ حکومت گلگت بلتستان میں آمدن کے اضافے کےلئے ٹیکس لگائے، ہم ساتھ دیں گے۔ حکومت نے بجٹ میں نان ٹیکس آمدن پیش کی ہے۔ حکومت ٹیکس آمدن پر آجائے ہم حکومت کے ساتھ کھڑے ہیں۔ بحث کے اختتام پر ڈپٹی سپیکر نے اپوزیشن لیڈر امجد حسین ایڈووکیٹ، حاجی رحمت خالق، نواز خان ناجی، انجینئر محمد انور، وزیر زراعت میثم کاظم، مشیر خوراک شمس الحق لون، وزیر بلدیات عبدالحمید اور پارلیمانی سیکرٹری برائے خوراک محمد ایوب وزیری پر مشتمل آٹھ رکنی سلیکٹ کمیٹی بنانے کا اعلان کرتے ہوئے کمیٹی کو ہدایت کی کہ وہ ایک ہفتہ کے اندر اندر گندم کے نرخوں میں اضافے اور پالیسی کے حوالے سے سفارشات تیار کرکے ڈپٹی سپیکر کے چیمبر میں جمع کرا دیں۔ ہم اسمبلی کے آئندہ اجلاس میں ان سفارشات کو پیش کریں گے